آیۃ اللہ اعرافی؛ اتحاد امت کے سلسلے میں فقہ شیعہ نے عظیم کردار ادا کیا ہے

Rate this item
(0 votes)
آیۃ اللہ اعرافی؛ اتحاد امت کے سلسلے میں فقہ شیعہ نے عظیم کردار ادا کیا ہے

حوزہ نیوز کی رپورٹ کے مطابق،سربراہ حوزہ علمیہ ایران آیت اللہ علی رضا اعرافی نے 36ویں اسلامی اتحاد کانفرنس کے چوتھے ویبینار میں اتحاد کی سائنسی اور علمی بنیادوں کے بارے میں کہا: جب ہم اتحاد و وحدت کی بات کرتے ہیں اور اتحاد، ہمیں یاد رکھنا چاہیے کہ اتحاد ایک مستحکم اتحاد ہو گا جس کی بنیاد درست سوچ اور فکر کی بنیاد پر ہو۔

انہوں نے یہ بیان کرتے ہوئے کہ ظاہری اور سطحی اتحاد کسی قوم کو نہیں بنا سکتا اور نہ ہی ایک محاذ پیدا کر سکتا ہے، فرمایا: اتحاد ہمیں عظیم نظریات کی طرف لے جا سکتا ہے جن کی جڑیں علمی، فکری اور سائنسی اصولوں پر ہیں۔

آیت اللہ علی رضا اعرافی نے یہ بیان کرتے ہوئے کہ اسلامی اتحاد کی جڑیں عالم اسلام کے تعلیمی نظاموں میں ہونی چاہئیں، وضاحت کی: سائنسی مراکز جو میدان اور دینی سائنسی مراکز ہیں، عالم اسلام کی یونیورسٹیوں کے ساتھ ساتھ اسلامی دنیا کے تعلیمی نظام کو بھی لازمی ہونا چاہیے۔ علمبردار اور اسکاؤٹس بنیں، اسلامی تشخص کو گہرا کریں اور امت اور نوجوان نسل میں اتحاد و یکسانیت کی تحریک کریں۔

انہوں نے کہا: سائنسی، دینی اور ثقافتی اداروں کی ترویج اور پیش قدمی اس صورت میں موثر اور پائیدار ہوسکتی ہے جب ان کی جڑیں اسلامی علوم اور اسلام کے بنیادی افکار سے وابستہ ہوں۔

آیت اللہ علی رضا اعرافی نے کہا کہ امت کے اتحاد، قربت، اور ہم آہنگی اور یکسانیت کے حصول کے لیے اتحاد و یگانگت کے زمرے میں تمام اسلامی مذاہب کے فلسفے اور کلمات کی عقلی تشریح اور جواز کی ضرورت ہے، اور کہا۔ : فقہی نظام اور اسلامی مکاتب کے شرعی اور فقہ میں اس اتحاد اور ہم آہنگی کی تشریح کی گئی ہے۔

مختلف مذاہب کی اسلامی اخلاقیات میں وحدت کی جڑوں کی موجودگی اور اثر کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے فرمایا: اگر ہم اسلامی رویہ کے ان تین زاویوں (ان کے مذہبی اور فلسفیانہ فکر کی سطح، ان کی فقہی اور شرعی فکر کو) بنا لیں۔ ، اور ان کی اخلاقی اور قدری سوچ) اتحاد سے ہم آہنگ ہے، دیکھتے ہیں کہ یہ اتحاد مزید گہرا ہوتا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا: اگر ایسا ہے تو یہ کہا جا سکتا ہے کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کلام میں مالا کے بیج اور کنگھی کے دانتوں کی طرح اکٹھے ہوئے ہیں اور ہم ایک ہو گئے ہیں۔

اس مسلمان مفکر نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ پھر ہم اپنی فقہ میں اتحاد کو مزید گہرا کر سکتے ہیں اور گہرائی دے سکتے ہیں تاکہ ہمارے فقہ کی بنیادیں اس اتحاد، یکسانیت اور ہمدردی اور صحبت کی راہیں کھولیں، انہوں نے کہا: میرے خیال میں ہماری فقہ کئی جہتوں میں ہے۔ ایک شناخت اور قومی اتحاد کے حصول کی شاہراہ کھول دی ہے۔

انہوں نے سماجی تعلقات کو شیعہ فقہ میں ایک اہم موضوع قرار دیا اور کہا: اگر ہم سماجی تعلقات کی فقہ پر پوری توجہ دیں تو ہم دیکھیں گے کہ چھوٹے اور بڑے ماحول میں انسانی تعلقات انہی اصولوں پر مبنی ہیں جو اسلام بیان کرتا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ مسلمانوں کے درمیان فقہ، سماجی تعلقات اور ایسوسی ایشن میں اہم اصول ہیں جہاں لوگ اسلام کے عمومی احکام میں شریک ہوتے ہیں، جو ہم آہنگی اور اتحاد لاتے ہیں۔

آیت اللہ علی رضا اعرافی نے اپنی تقریر کے ایک اور حصے میں اسلامی اتحاد کو مستحکم کرنے کے لیے اصول فقہ کی طرف واپسی کو امت اسلامیہ کے لیے ایک راستہ قرار دیا اور مزید کہا: اگر اس فقہ کو تمام مذاہب میں صحیح طور پر تسلیم کیا جائے اور اسے مشترکہ تناظر میں پیش کیا جائے تو اس کی راہ ہموار ہوگی۔ بہت سے لوگوں کے لیے راستہ یہ مذہبی تشدد کو بند کرتا ہے اور اسلامی دنیا میں اتحاد کی راہ ہموار کرتا ہے۔

انہوں نے یہ بیان کرتے ہوئے کہ اسی طرح کے فقہی مسائل علمی اور فلسفی مسائل اور اخلاقی اور قدری مسائل میں موجود ہیں اور تاکید کی: ہماری سائنسی بنیادوں میں امت اسلامیہ کے اتحاد اور مشترکہ شناخت کے استدلال کی بنیادوں کو پہچاننا ضروری ہے۔

اس مسلمان مفکر نے مزید کہا: اگر آج رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ سلم ہمارے درمیان ہوتے تو ہم سب کو ان انتشار سے بچاتے۔ بلاشبہ عالمِ اسلام کے اس ہنگامے سے رسولِ خدا کا دل مبارک ناراض ہے۔

انہوں نے عالم اسلام میں غیروں اور دنیا خوروں کے اثر و رسوخ، امت اسلامیہ کے مفادات کو لاحق خطرات، جنگ و جدل، انتشار اور اسرائیل جیسی غاصب حکومت کے ظہور کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ سلم کے قلب مبارک کی وجہ قرار دیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اسلامی امت کے پڑھے لکھے اور اشرافیہ کو ان تکلیفوں کا شکار نہیں ہونا چاہیے، بنیادی طور پر سوچیں۔

آیت اللہ علی رضا اعرافی نے کہا: اگر ملت اسلامیہ پر تمام اختلافات کے ساتھ اتحاد کی ہوا چلی تو یہ دنیا کی ایک عظیم اور بااثر طاقت بن جائے گی۔

Read 390 times