حج معصومین [ع] کی زبان سے ۱

Rate this item
(0 votes)

حج کا واجب ھونا

قَالَ عَلِی (ع:(

فَرَضَعَلَیْکُمْ حَجَّ بَیْتِہِ الْحَرَامِ الَّذِی جَعَلَہُ قِبْلَةً لِلْا نَٔامِ ”۔[ 1

حضرت علی (ع)نے فرمایا:

”خداوند عالم نے اپنے اس محترم گھر کے حج کو تم پر واجب قرار دیا ھے جسے اس نے لوگوں کا قبلہ بنایا

ھے”۔

قال علی (ع:(

”فَرَضَحَجَّہُ وَا ؤَجَبَ حَقَّہُ وَکَتَبَ عَلَیْکُمْ وِفَادَتَہُ فَقَالَ سُبْحَانَہُ> وَلِلّٰہِ عَلَی النَّاسِ حجُّ الْبَیْتِ مَنِ اسْتَطاٰعَ إِلَیْہِ سَبِیلاً وَمَنْ کَفَرَ فَإِنَّ اللّٰہَ غَنِیٌّ عَنِ الْعٰالَمِینَ[ 2

حضرت علی (ع)نے فرمایا:

”خدا وند عالم نے کعبہ کے حج کو واجب ،اس کے حق کی ادائیگی کو لاز م اور اس کی زیارت کو تم پر مقرر کیا ھے پس وہ فرماتا ھے:“لوگوں پر خدا کا حق یہ ھے کہ جو بھی خدا کے گھر تک جانے کی استطاعت رکھتا ھے وہ بیت الله کی زیارت کے لئے جائے اور وہ

شخص جو کفر اختیار کرتا ھے (یعنی حج انجام نھیں دیتا )تو خدا عالمین سے بے نیاز ھے

 

حج کا فلسفہ

 

قال علی (ع:(

”جَعَلَہُ سُبْحَانَہُ عَلاٰمَةً لِتَوَاضُعِھِمْ لِعَظَمَتِہِ و اَذعانَھُمْ لِعِزَّتِہِ”۔[ 3

حضرت علی (ع)نے فرمایا:

”خدا وند عالم نے کعبہ کے حج کو علامت قرار دیا ھے تاکہ لوگ اس کی عظمت کے سامنے فروتنی کا اظھارکریں اور پروردگار عالم کے غلبہ نیز اس کی عظمت و بزرگواری کا اعتراف کریں ”۔

قال علی (ع:(

[ ”جَعَلَہُ سُبْحَانَہُ لِلْإِسْلاٰمِ عَلَماًوَلِلْعَائِذِینَ حَرَماً”۔[ 4

حضرت علی (ع)نے فرمایا:

”خدا وند عالم نے حج اور کعبہ کو اسلام کا نشان اور پرچم قرار دیا ھے اور پناہ لینے والے کے لئے اس جگہ کو جائے امن بنایا ھے”۔دین کی تقویت کا سبب

قال علی (ع:(

۔۔۔وَالْحَجَّ تَقْوِیَةً لِلدِّینِ[ 5

حضرت علی (ع)نے فرمایا:

”۔۔۔اورحج کو دین کی تقویت کا سبب قرار دیاھے”۔

دلوں کا سکون

قال الباقر (ع:(

الحَجُّ تَسْکِین القُلُوبُ[ 6

امام محمد باقر (ع)فرماتے ھیں:

”حج دلوں کی راحت وسکون کا سبب ھے”۔

حج ترک کرنے والا

قال رسول الله (ص:(

مَنْ مَاتَ وَلَمْ یَحُجَّ فَلْیَمُتْ إِنْ شَاءَ یَھُودِیّاً وَإِنْ شَاءَ نَصْرَانِیّاً”۔[ 8

پیغمبر اسلام (ص)نے فرمایا:

”جو شخصحج انجام دیئے بغیر مر جائے (اس سے کھا جائے گا کہ ) تو چاھے یہودی مرے یا نصرانی ”۔

یھی مضمو ن ایک دوسری روایت میں امام جعفر صادق (ع) سے بھی نقلھواھے۔[ 9

حج و کامیابی

لوگوں نے امام محمد باقر (ع)سے دریافت کیا کہ حج کا نام حج کیوں رکھا گیاھے ؟تو آپ نے فرمایا:

[ ” قَالَ حَجَّ فُلاٰنٌ ا یَٔ ا فَٔلَحَ فُلاٰنٌ”۔[ 10

”فلاں شخص نے حج کیا یعنی وہ کامیاب ھوا ”۔

حج کی اھمیت

محمد بن مسلم کھتے ھیں کہ:

امام محمد باقر (ع)یا امام جعفر صادق (ع)نے فرمایا:

[ ”وَدَّ مَنْ فی الْقُبُورِ لَوْ ا نَّٔ لَہُ حَجَّةً وَاحِدَةً بِالدُّنْیَا وَمَا فِیھَا”۔[ 11

”مُردے اپنی قبروں میں یہ آرزو کرتے ھیں کہ اے کاش!وہ دنیا،اور دنیا میں جو کچھ بھی ھے دیدیتے اور اس کے عوضانھیں ایک حج کا ثواب مل جاتا ”۔

حج کا حق

قال الإمام زَیْنُ العابِدِین(ع) فِی رسالَةِ الحُقُوق: “حَقُّ الْحَجِّ ا نَْٔ تَعْلَمَ ا نََّٔہُ وِفَادَةٌ إِلَی رَبِّکَ وَفِرَارٌ إِلَیْہِ مِنْ ذُنُوبِکَ وَفِیہِقَبُولُ تَوْبَتِکَ وَقَضَاءُ الْفَرْضِالَّذِی ا ؤَْجَبَہُ اللّٰہُ تَعَالیَ عَلَیْکَ”۔[ 12

امام زین العابدین (ع) اپنے رسالہ حٔقوق میں فرماتے ھیں:

”حج کا حق تم پر یہ ھے کہ جان لو حج اپنے پروردگار کے حضو رمیں تمھاری حاضری ھے اوراپنے گناہوں سے اس کی جانب فرار ھے حج میں تمھاری توبہ قبول ھوتی ھے اوریہ ایک ایسا فریضہ ھے جسے خدا وند عالم نے تم پر واجب کیا ھے”۔

خد اجوئی

قال الصادق (ع:(

“.[ ”مَنْ حَجَّ یُرِیدُ اللّٰہَ عَزَّوَجَلَّ لاٰ یُرِیدُ بِہِ رِیَاءً وَلاٰ سُمْعَةً غَفَرَ اللّٰہُ لَہُ اَلْبَتَّةَ[ 13

امام جعفر صادق (ع)نے فرمایا:

”جو شخصحج کی انجام دھی میں خدا کا ارادہ رکھتاھواور ریاکاری و شھرت کا خیال نہ رکھتاھو خدا وند عالم

یقینا اسے بخش دے گا”۔

حج کا ثواب

قالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص:(

[ ”لَیْسَ لِلْحِجَّةِ الْمَبْرُورَةِ ثَوابٌ إِلاَّ الجَنَّةَ ”۔[ 14

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”حج مقبول کا ثواب جنت کے سوا کچھ اور نھیں ھے”۔

حج کی تاثیر

ہشام بن حکم کھتے ھیں:

امام جعفر صادق (ع) نے فر مایا:

[ ”مَامِن سَفَرٍا بَٔلَغَ فِی لَحْمٍ وَلاٰدَمٍ وَلاٰجِلْدٍ وَلاٰ شَعْرٍ مِنْ سَفَرِ مَکَّةً وَمَا ا حََٔدٌ یَبْلُغُہُ حَتَّی تَنَالَہُ الْمَشَقَّةُ”۔[ 15

”مکہ کے سفر کی طرح کوئی سفر بھی انسان کے گوشت، خون، جلد، اور بالوں کوکا متاثر نھیں کرتا اور کوئیشخص سختی اور مشقت کے بغیر وہاں تک نھیں پہنچتا ”۔

حج میں نیت کی اھمیت

قال الصادق(ع:(

”لَمَّا حَجَّ مُوسَی(ع)نَزَلَ عَلَیْہِ جَبْرَئِیلُ فَقَالَ لَہُ مُوسَی یَا جَبْرَئِیلُ ۔۔۔مٰا لِمَنْ حَجَّ ھَذَا الْبَیْتَ بَنِیَّہٍ صَادِقَةٍ وَنَفَقَةٍ طَیِّبَةٍ؟قَالَ:فَرَجَعَ إِلَی اللّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ،فَا ؤَْحَی اللّٰہُ تَعَالیٰ إِلَیْہِ؛قُلْ لَہُ:ا جَْٔعَلُہُ فِی الرَّفِیقِ الْا عَٔلَی مَعَ النَّبِیِّینَ وَالصِّدِّیقِینَ وَالشُّھَدَاءِ وَالصَّالِحِینَ وَحَسُنْ ا ؤُلَئِکَ رَفِیقاً”۔[ 16

”جس وقت جناب موسیٰ نے حج کے اعمال انجام دیئے تو جبرئیل (ع) ان پر نازلھوئے جناب موسیٰ نے ان سےپوچھا:

اے جبرئیل (ع!(

جو شخصاس گھر کا حج سچی نیت اور پاک خرچ سے بجا لائے اس کی جزا کیا مقررھوئی ھے جبرئیل کچھجواب دیئے بغیر خدا وند عالم کی بارگاہ میں واپس گئے (اور اس کا جواب دریافت کیا)خداوند عالم نے ان پر وحی کی اور فرمایا:موسیٰ سے کہو کہ میں ایسے شخص کو ملکوت اعلیٰ میں پیغمبروں صدیقوں ،شھدا اور صالحین کا ھم نشین قرا ر دوں گااور وہ بھترین رفیق اور دوست ھیں”۔

نور میں واردھونا

عبد الرحمان بن سمرة کھتے ھیں:ایک روز میں حضرت پیغمبر اکرم(ص) کی خدمت میں تھا کہ آنحضرت(ص)نے فرمایا:

”إِنِّی رَا یَٔتُ الْبَارِحَةَ عَجَائِبَ”۔

میں نے گذشتہ رات عجائبات کا مشاھدہ کیا ۔

ھم نے عرض کی کہ اے رسو ل خدا (ص)!ھماری جان ھمارا خاندان اور ھماری اولاد آپ(ص)پر فداھوں آپ نے کیا دیکھا ھم سے بھی بیان فرمایئے:

فقال۔۔۔

رَا یَٔتُ رَجُلاً مِنْ ا مُّٔتِی مِنْ بَیْنِ یَدَیْہِ ظُلُمَةٌ وَمِنْ خَلْفِہِ ظُلْمَةٌ وَعَنْ __________یَمِینِہِ ظُلَمَةٌ وَعَنْ شِمَالِہِ ظُلْمَةٌ وَمِنْ تَحْتِہِ ظُلْمَةٌ مُسْتَنْقِعاً فِی الظُّلْمَةِ فَجَاءَ ہُ حَجُّہُ وَعُمْرَتُہُ فَا خَٔرَجَاہُ مِنَ الظُّلْمَةِ وَا دَٔخَلاٰہُ فِی النُّورِ۔۔۔۔[ 17

”فرمایا:میں نے اپنی امت میں سے ایک شخص کو دیکھا کہ اس کے سامنے سے، پشت سے ، دائیں اور بائیںسے،اور قدموں کے نیچے سے ، اسے تاریکی نے گھیر رکھا تھا اور وہ ظلمت میں غرق تھا اس کا حج اور اس کا عمرہ اس کے پاس آئے اور انھوں نے اسے تاریکی سے نکال کر نور میں داخل کردیا ”۔

حق کے حضور حاضری

قالَ عَلِیٌّ (ع:(

اَلْحَاجُّ وَالْمُعْتَمِرُ وَفْدُاللّٰہِ،وَحَقٌّ عَلَی اللّٰہِ ا نَْٔ یُکْرِمَ وَفْدَہُ وَیَحْبُوَہُ بِالْمَغْفِرَةِ۔[ 18

حضرت علی(ع) فرماتے ھیں:

”حج اور عمرہ انجام دینے والا خدا کی بارگا ہ میں حاضرھونے والوں میں سے اور خدا پر ھے کہ اپنی بارگاہ میں آنے والے کا اکرام کرے اور اسے اپنی مغفرت و بخشش میںشامل قرار دے ’ ’۔

خدا وند عالم کی میزبانی

قال الصّادق (ع:(

إِنَّ ضَیْفَ اللّٰہِ عَزَّوَجَلَّ رَجُلٌ حَجَّ وَ اعْتَمَرَ فَھُوَ ضَیْفُ اللّٰہِ حَتَّی یَرْجِعَ إِلَی مَنْزِلِہِ۔[ 19

امام جعفر صادق نے فرمایا:

”جو شخص حج یا عمرہ بجالائے وہ خدا کا مھمان ھے اور جب تک وہ اپنے گھر واپس نہھو جائے ا س کا مھمان باقی رھتا ھے ’ ’ ۔

حج اور جھاد

قال رسول الله(ص:(

جِھٰادُ الْکَبیرِ وَالصَّغیرِ وَالضَّعیفِ وَالْمَرا ةَِٔ الْحَجُّ وَالْعُمْرَةُ۔[ 20

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”عورتوںاور کمزور لوگوں کا حج اور عمرہ بڑا جھاد اور چھوٹا جھاد ھے”۔

حج عمرہ سے بھتر ھے

قال رسول الله (ص:(

اِعْلَمْ اَنَّ الُعُمْرَةَ ھِیَ الْحَجُّ الاصُٔغَرُ،وَاَنَّ عُمْرَةً خَیْرٌ مِنَ الدُّنْیٰا وَمٰا فیھٰا وَحَجَّةً خَیْرٌ مِنْ عُمْرَةٍ۔[ 21

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے عثمان بن ابی العاصسے فرمایا:

”جان لو کہ عمرہ حج اصغر ھے اور بلا شہ عمرہ دنیا اور جو کچھ اس کے اندر ھے ان سب سے بھتر ھے

،نیز یہ بھی جان لو کہ حج عمرہ سے بھتر ھے” ۔

گناہ دُھل جاتے ھیں

قال رسول الله (ص:(

اَیُّ رَجُلٍ خَرَجَ مِنْ مَنْزِلِہ حٰاجاًاَوْ مُعْتَمِراً، فَکُلَّمٰا رَفَعَ قَدَماًوَ وَضَعَ قَدَماً،تَنٰاثَرَتِ الذُّنُوبُ مِنْ بَدَنِہِ کَمٰایَتَنٰا ثَرُ الْوَرَقُ مِنَالشَّجَرِ،فَاِذَا وَرَدَ الْمَدِیْنَةَ وَصٰافَحَنی بِالسَّلاٰمِ،صٰافَحَتْہُ الْمَلاٰئِکَةُ بِالسَّلاٰمِ،فَاِذَا وَرَدَ ذَالْحُلَیْفَةَ وَاغْتَسَلَ،طَھَّرَہ اللّٰہُ مِنَالذُّنُوبِ،وَاِذَا لَبِسَ ثَوْبَیْنِ جَدیدَیْنِ،جَدَّدَ اللّٰہُ لَہُ الْحَسَنٰاتِ و اَِذَا قَالَ:اللّٰھُمَّ لَبَّیْکَ، ا جَٰٔابَہُ الرَّبُّ عَزَّوَجَلَّ:“لَبَّیْکَ وسَعْدَیْکَ،اَسْمَعُ کَلاٰمَکَ وَاَنْظُرُ اِلَیْکَ،فَاِذَا دَخَلَ مَکَّةَ وَ طٰافَ وَسَعٰی بَیْنَ الصَّفٰاوَالْمَرْوَةَ وَصَلَ اللّٰہُ لَہُ الْخَیْراتِ۔۔۔۔[ 22

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”جو شخصحج وعمرہ کے لئے اپنے گھر سے باھر نکلتا ھے پس جو قدم بھی وہ اٹھاتا اور زمین پر رکھتا ھے اس کے بدن سے گناہ یوں گرتے جاتے ھیں جیسے درختوں سے پتے چھڑتے ھیں، پس جب وہ شخصمدینہ میں واردھوتا ھے اور سلام کے ذریعہ مجھ سے مصافحہ کرتا ھے تو فرشتے بھی سلام کے ذریعہ اس سے ھاتھ ملاتے ھیں اور مصافحہ کرتے ھیں اور جب وہ ذولحلیفہ (مسجد شجرہ) میںواردھو کر غسل کرتا ھے تو خدا وند عالم اسے گناہوں سے پاک کردیتا ھے۔ جب وہ احرام کے دو جامہ اپنے تن پر لپٹتا ھے تو خدا وند عالم اسے نئے حسنات اور ثواب عطا کرتا ھے جب وہ “لبیک اللھم لبیک ”کھتا ھے تو خداوند عزوجل اسے جواب دیتےھوئے فرماتا ھے “لیبک و سعدیک” میں نے تیرا کلام اور تیری آواز سنی اور (عنایت کی نظر )تجھ پر ڈال رھاھوں اور جب وہ مکہ میں واردھوتاھے اور طواف نیز صفا ومروہ کے درمیان سعی انجام دیتا ھے تو خد اوند عالم ھمیشہ کی نیکیاں اور

خیرات اس کے شامل حال کر دیتا ھے”۔

دعا کی قبولیت

قالَ رَسُولُ اللّٰہ (ص:(

اَرْبَعَةٌ لا تُرَدُّ لَھُمْ دَعُوَةٌ حَتّٰی تُفْتَحَ لَھُمْ اَبْوٰابُ السَّمٰاءِ وَتَصیرَ إِلَی الْعَرْشِ:

[ اَلْوٰالِدُ لِوَلَدِہِ،وَالْمَظْلُومُ عَلٰی مَنْ ظَلَمَہُ، وَالْمُعْتَمِرُحَتّی یَرْجِعَ ، والصّٰائِمُ حَتّٰی یُفْطِرَ۔[ 23

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”چار لوگ ایسے ھیں جن کی دعا رد نھیںھوتی یھاں تک کہ آسمان کے دروازے ان کے لئے کھو ل دیئے جاتے ھیں اور دعائیں عرش الٰھی تک پہنچ جاتی ھیں:

١۔باپ کی دعا اولاد کے لئے ،

٢۔مظلوم کی دعا ظالم کے خلاف،

٣۔عمرہ کرنے والے کی دعا جب تک کہ وہ اپنے گھر واپس آجائے ۔

۴۔روزہ دار کی دعا یھاں تک کہ وہ افطار کر لے ۔

دنیا بھی اور آخرت بھی

قالَ رَسُولُ اللّٰہ (ص:(

مَنْ اَرَادَا لدُّنْیٰاوَالآخِرَةَ فَلْیَو مُّٔ ھٰذَاالبَیْتَ،فَمٰا ا تٰٔاہُ عَبْدٌ یَسْا لَٔ اللّٰہَ دُنْیٰا اِلاَّ ا عَٔطٰاہُ اللّٰہُ مِنْھٰا،وَلایَسْا لَٔہُ آخِرَةً اِلاَّادَّخَرَلَہُمِنْھٰا۔[ 24

رسو ل خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”جو شخصدنیا اور آخرت کو چاھتا ھے وہ اس گھر کی طرف آنے کا ارادہ کرے بلاشبہ جوبھی اس جگہ پر آیا اور اس نے خدا سے دنیا مانگی تو خداوند عالم نے اس کی حاجت پوری کردی نیز یہ کہ اگر خدا وند عالم سے اس نے آخرت طلب کی تو خدا وند عالم نے اس کی یہ دعا بھی قبول کی اور اسے اس کے لئے ذخیرہ کردیا”۔

آگاھی کے ساتھ حج

قالَ رَسُولُ اللّٰہ (ص):فی خُطْبَتِہِ یَوْمَ الْغَدِیر :مَعٰاشِرَ النّٰاسِ، حُجُّواالْبَیْتَ بِکَمٰالِ الدّینِ وَالتَّفَقُّہ، وَلا تَنْصَرِفُواعَنِ

[ الْمَشٰاھِدِ اِلاَّ بِتَوْبَةٍ واِقْلاٰعٍ۔[ 25

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے یوم غد یر کے خطبہ میں فرمایا:

”اے لوگو! خانہ خٔدا کا حج پوری آگاھی اور دینداری سے کرو ، اوران متبرک مقامات سے توبہ اور گناہوں کی بخشش کے بغیر واپس نہ لوٹو ”۔

شرط حضور

قَالَ ا بَٔو عَبْدِاللّٰہِ (ع)کاَنَ ا بَٔی یَقُولُ:

[ مَنْ ا مَّٔ ھَذَاالْبَیْتَ حَاجّاً ا ؤَمُعْتَمِراًمُبَرَّا مًٔنَ الْکِبْرِ رَجَعَ مِنْ ذُنُوبِہِ کَھَیْئَةِ یَوْمَ وَلَدَتْہُ ا مُّٔہُ۔[ 26

امام جعفر صادق (ع)نے فرمایا:

”میرے پدر بزرگوار فرمایا کرتے تھے کہ جو شخص حج یا عمرہ کے لئے اس گھر کی طرف روانہ ھو اور خود کو کبر و خود پسندی سے دور رکھے تو وہ گناہوں سے اسی طرح پاکھو جاتا ھے جیسے اسے اس کی ماں نے ابھی پیدا کیاھو”۔

حج کی برکتیں

عَنْ ا بَٔی عَبْدِ اللّٰہِ (ع)قَالَ:قَالَ عَلِیُّ بْنُ الْحُسَیْنِ) ع:(

حَجُّوا وَاعْتَمِرُوا،تَصِحَّ ا بَٔدَانُکُمْ،وَتَتَّسعَ ا رَٔزَاقُکُمْ،وَتُکْفَوْا مَو ؤُنٰاتِ عِیَالِکُمْ،وَقَالَ:الْحَاجُّ مَغْفُورٌ لَہُ وَمَوْجُوبٌ لَہُ الْجَنَّةُ،وَمُسْتَا نْٔفٌ لَہُ الْعَمَلُ،وَمَحْفُوظٌ فِی ا ھَٔلِہِ وَمَالِہِ۔[ 27

امام جعفر صادق (ع)سے روایت ھے کہ آپ نے فرمایا:

”علی بن الحسین علیھما السلام فرماتے تھے کہ:حج اور عمرہ بجالاو تٔاکہ تمھارے جسم سالم،تمھاری روزیاںزیادہ اور تمھار ے خانوادہ اور زندگی کا خرچ پوراھو آپ مزید فرماتے تھے:حاجی بخش دیا جاتا ھے جنت اس پر واجبھو جاتی ھے ، اس کا نامۂ عمل پاک کر کے پھر سے لکھا جاتا ھے اور اس کا مال اور خاندان امان میں رھتے ھیں”۔

جو حج قبول نھیں

عَنْ ا بَٔی جَعْفَرٍ الْبَاقِرِ(ع)قَالَ:

مَنْ اصَٔابَ مَالاً مِنْ ا رَٔبَعٍ لَمْ یُقْبَلْ مِنْہِ فِی ا رَٔبَعٍ: مَنْ اصَٔابَ مَالاً مِنْ غُلُولٍ ا ؤَ رِبًا ا ؤَ خِیَانَةٍا ؤَ سَرِقَةٍ لَمْ یُقْبَلْ مِنْہُ فِیزَکَاةٍ وَلاٰ صَدَقَةٍ وَلاٰحَجٍّ وَلاٰ عُمْرَةٍ۔[ 28

امام محمد باقر (ع)فرماتے ھیں:

”جو شخصچار طریقوں سے مال اور پیسہ حاصل کرے اس کا خرچ کرنا چار چیزوں میں قبول نھیں ھے:

جو شخصآلودگی اور فریب کی راہ سے،سودکے ذریعہ، خیانت کے ذریعہ اور چوری کے ذریعہ پیسہ حاصل کرے تو اس کی زکات ، صدقہ،حج اور عمرہ کرنا قبول نھیں ھے ’ ’ ۔

مال حرام کے ذریعہ حج

قال ا بٔو جعفر(ع:(

لا یَقْبَلُ اللّٰہُ عَزَّوَجَلَّ حَجّاًوَلاٰعُمْرَةً مِنْ مالٍ حَرامٍ۔[ 29

امام محمد باقر(ع) فرماتے ھیں :

”خدا وند عالم حرام مال کے ذریعہ کئے جانے والے حج و عمرہ کو قبول نھیں کرتا ”۔

حاجی کا اخلاق

عَنْ ا بَٔی جَعْفَرٍ(ع) قَالَ:

مَا یُعْبا مُٔنْ یَسْلُکُ ھَذَا الطَّرِیقَ اِذَا لَمْ یَکُنْ فِیْہِ ثَلاٰثُ خِصَالٍ: وَرَعٌ یَحْجُزُہُ عَنْ مَعَاصِی اللّٰہِ،وَحِلْمٌ یَمْلِکُ بِہِ غَضَبَہُ،وَ حُسْنُ الصُّحْبَةِ لِمَنْ صَحِبَہُ۔[ 30

امام محمد باقر (ع)نے فرمایا:

”جو شخص حج کے لئے اس راہ کو طے کرتا ھے اگر اس میں تین خصلتیں نہھوں تو وہ خدا کی توجہ کا مرکز نھیں بنتا:

١۔تقویٰ وپرھیز گاری جو اسے گناہ سے دور رکھے۔

٢۔صبر وتحمل جس کے ذریعہ وہ اپنے غصہ پر قابو رکھے۔

٣۔اپنے ساتھیوں کے ساتھ اچھا سلوک ۔

کامیاب حج

قال رسول الله (ص:(

[ مَنْ حَجَّ ا ؤَ اعْتَمَرَ فَلَمْ یَرْفَثْ وَلَمْ یَفْسُقْ یَرْجِعُ کَھَیْئَةِ یَومٍ وَلَدَتْہُ ا مُّٔہُ۔[ 31

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”جس نے حج یا عمرہ کیا اورکوئی فسق وفجور انجام نہ دیا تو وہ اس شخص کی طرح پاک واپس ھوتا ھےجیسے اس کی ماں نے اسے ابھی پیدا کیا ھے”۔

حج کی قسمیں

عَنْ ا بَٔی عَبْدِ اللّٰہِ (ع)قَالَ:

الْحَجُّ حَجَّانِ:حَجُّ اللّٰہِ،وَحَجُّ لِلنَّاسِ،فَمَنْ حَجَّ لِلّٰہِ کَانَ ثَوَابُہُ عَلَی اللّٰہِ الْجَنَّةَ،وَمَنْ حَجَّ لِلنَّاسِ کاَنَ ثَوَابُہُ عَلَی النَّاسِ یَوْمَالْقِیَامَةِ۔[ 32

امام جعفر صادق (ٍع)فرماتے ھیں:

حج کی دو قسمیں ھیں:

”خدا کے لئے حج اور لوگوں کے لئے حج،پس جو شخص خداکے لئے حج بجالایا اس کی جزا وہ خدا سے جنت کی شکل میں حاصل کرے گا اور جو شخص لوگوں کے دکھانے کے لئے حج کرتا ھے اس کی جزا قیامت کے دن لوگوں کے ذمہ ھے ”۔

حاجیوں کی قسمیں

معاویہ ابن عمار کھتے کہ امام صادق (ع)نے فرمایا:

الْحَاجُّ یَصْدُرُونَ عَلَی ثَلاٰثَةِ اصَٔنَافٍ:فَصِنْفٌ یَعْتِقُونَ مِنَ النَّارِ،وَصِنْفٌ یَخْرُجُ مِنْ ذُنُوبِہِ کَیَوْمٍ وَلَدَتْہُ ا مُّٔہُ،وَصِنْفٌ یُحْفَظُ فِی ا ۂَلِہِ وَمَالِہِ،فَذَلِکَ ا دَٔنَی مَا یَرْجِعُ بِہِ الْحَاجُّ۔[ 33

”حاجی تین قسم کےھوتے ھیں:

ایک گروہ جہنم کی آگ سے رھائی پاتا ھے ،دوسرا گروہ گناہوں سے اس طرح پاکھوتا ھے جیسے وہ ابھی اپنی ماں کے بطن سے پیداھواھو، اور تیسرا گروہ وہ ھے کہ اس کا خاندان اور اس کا مال محفوظھوجاتا ھے اوریہ وہ کمترین جزا ھے جس کے ساتھ حاجی واپسھوتے ھیں”۔

ناکام حاجی

قال رسول الله (ص:(

یَا تٔی عَلَی النَّاسِ زَمانٌ یَحُجُّ ا غٔنِیاءُ ا مَٔتِّی لِلنُّزھَةِ،وَا ؤَساطُھُمْ لِلْتِجارةِ،وَقُرّاو ھُٔمْ للریّاءِ وَالسَّمْعَةِ وَفُقَرائُھُم لِلمسا لٔةِ۔( ١

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”لوگوں پر ایسا زمانہ آئے گا کہ میری امت کے دولت مندلوگ سیرو تفریح کے لئے اور درمیانی طبقہ کے لوگتجارت کے لئے قاری حضرات ریاکاری اور شھرت کے لئے اور فقرا مانگنے کے لئے حج کو جائیں گے ”۔

اپنے ھمراھیوں کے ساتھ سلوک

قَالَ ا بَٔو عَبْدِ اللّٰہِ(ع :(

وَطِّنْ نَفْسَکَ عَلَی حُسْنِ الصِّحَابَةِ لِمَنْ صَحِبْتَ فِی حُسْنِ خُلْقِکَ،وَکُفَّ لِسَانَکَ،وَاکْظِمْ غَیْظَکَ،وَا قَٔلَّ لَغْوَکَ،وَتَفْرُشُ عَفْوَکَ، وَتَسْخُو نَفْسَکَ۔[ 34

امام جعفر صادق (ع)نے فرمایا:

”خود کو آمادہ کرو تاکہ جس شخص کے بھی ھمراہ سفر کرو اچھے اور خوش اخلاق ساتھی رہو اور اپنی زبان کو قابو میں رکھو ،اپنے غصہ کو پی جاو ،ٔبیہودہ وبے فائدہ کام کم کرو ،اپنی بخشش کو دوسروں کے لئے وسیعکرو،اور سخا وت کرنے والے رہو”۔

راہ کی اذیت

عَنْ ا بَٔی عَبْدِ اللّٰہِ (ع)قَالَ:

مَنْ ا مَٔاطَ ا ذَٔی عَنْ طَرِیقِ مَکَّةَ کَتَبَ اللّٰہُ لَہُ حَسَنَةً وَمَنْ کَتَبَ لَہْ حَسَنَةً لَمْ یُعَذِّبْہُ۔[ 35

امام جعفر صادق نے فرمایا:

”جو شخص مکہ کی راہ میں اذیت و تکلیف اٹھا ئے خدا وند عالم اس کے لئے نیکی لکھتا ھے اور جس شخصکے لئے خداوند عالم نیکی لکھتا ھے اسے عذاب نھیں دیتا ”۔

حج کی راہ میں موت

قال الصادق(ع:(

عَنْ عَبْدِ اللّٰہِ بْنِ سِنَانٍ عَنْ ا بَٔی عَبْدِ اللّٰہِ(ع (قَالَ: مَنْ مَاتَ فِی طَرِیقِ مَکَّةَ ذَاھِباًاَّوُ جَائِیاً ا مَٔنَ مِنَ الّفَزَعِ الّا کَٔبَرِ یَوْمَ الْقِیَامَةِ۔[ 36

عبد الله ابن سنان سے روایت ھے کہ امام جعفر صادق (ٍع)نے فرمایا:

”جو شخص مکہ کی راہ میں جاتے وقت یا واپسھوتے وقت مرجائے وہ قیامت کے دن کے عظیم خوف ھراس سے امان میں ر ھے گا ”۔

حج میں انفاق کرنا

قال الصادق (ع:(

دِرْھَمٌ فِی الْحَجِّ ا فَٔضَلُ مِنْ ا لَٔفِیْ ا لَٔفٍ فِیمَا سِوَی ذَلِکَ مِنْ سَبِیلِ اللّٰہِ ”۔[ 37

امام جعفر صادق (ع)فرماتے ھیں:

”حج کی راہ میں ایک درھم خرچ کرنا حج کے علاوہ کسی اور دینی راہ میں بیس لاکھ درھم خرچ کرنے سے

بھتر ھے”۔

 

احرام کا فلسفہ

عَنِ الرِّضَا(ع:(

فَاِنْ قَالَ:فَلِمَ اُمِرُوا بِالإحْرٰامٍ؟قیل:لِاَ ن یَتَخَشَّعُوا قَبْلَ دُخُولِ حَرَمَ اللّٰہِ عَزَّوَجَلَّ وَاَمْنِہِ وَلِئَلاّ یَٰلْھُوا وَیَشْتَغِلُوا بِشَیْءٍ مِنْا مُٔرِ الدُّنْیَا وَزِینَتِھَا وَالَذَّاتِھَا وَیَکُونُوا جَادِّینَ فِیمَا ھُمْ فِیہِ قَاصِدِینَ نَحْوَہُ،مُقْبِلِینَ عَلَیْہِ بِکُلِّیِّتِھِمْ،مَعَ مَا فِیہِ مِنَ التَّعْظیمِ لِلّٰہِتعٰالی وَلِبَیْتِہِ،وَالتَّذَلُّلِ لِا نَٔفُسِھِمْ عِنْدَ قَصْدِ ھِمْ إِلَی اللّٰہِ تَعٰالیٰ وَوِفَادَتِھِمْ إِلَیْہِ، رَاجِینَ ثَوَابَہُ،رَاھِبِینَ مِنْ عِقَابِہِ،مَاضِینَ نَحْوَہُ مُقْبِلِینَ إِلَیْہِ بِالذُّلِّ وَالِاسْتِکَانَةِ وَالْخُضُوعِ۔[ 38

امام علی رضا (ع)نے فرمایا:

”اگر یہ کھا جائے کہ لوگوں کواحرام پہننے کا حکم کیوں دیا گیا ھے ؟ تو یہ کھا جائے گا کہ :اس لئے کہ لوگ الله کے حرم اور امن وامان کی جگہ میں واردھونے سے پھلے خاشع اور منکسر مزاجھوں ، امور دنیا ،اس کیلذتوںاور زینتوں میں سے کسی بھی چیز میں خودکو مشغول نہ کریں جس کام کے لئے آئے ھیںاور جس کاارادہ رکھتے ھیں اس پر صابر رھیں اور پورے وجود سے اس پر عمل کریں۔ اس کے علاوہ احرام میں خدااور اس کے گھر کی تعظیم۔ اپنی فروتنی اور باطنی ذلت وحقارت ، خدا کی طرف قصد اور اس کے حضور واردھونا ھے،جب کہ وہ اس سے جزا کی امید رکھتے ھیں اس کے عقاب اور سزا سے

خوف زدہ ھیں اور انکسار وفروتنی اور ذلت خوا ری کی حالت میں اس کی طرف رخ کئےھوئے ھیں”۔

احرام کا ادب

قَالَ ا بَٔو عَبْدِ اللّٰہِ(ع:(

إِذَا ا حَٔرَمْتَ فَعَلَیْکَ بِتَقْوَی اللّٰہِ،وَذِکْرِ اللّٰہِ کَثِیراً،وَقِلَّةِ الْکَلاٰمِ إِلاَّ بِخَیْرٍ،فَإِنَّ مِنْ تَمَامٍ الْحَجِّ وَالْعُمْرَةِ ا نَٔ یَحْفَظَ الْمَرْءُ لِسَانَہُإِلاَّ مِنْ خَیْرٍ۔[ 39

امام جعفر صادق (ع)نے فرمایا:

”جب محرمھو جاو تٔو تم پر لازم ھے کہ باتقویٰ رہو ،خدا کو بھت یاد کرو ،نیکی کے علاوہ کوئی بات نہ کرو کہ بلا شبہ حج اور عمرہ کا کاملھونا یہ ھے کہ انسان اپنی زبان کو نیکی کے علاوہ کسی اور امر میں نہ کھولے ”۔

حقیقی لبیک

قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ (ص): مَا مِنْ مُلَبٍّ یُلَبّی اِلاَّ لَبّٰی مَا عَنْ یَمینِہِ وَشِمٰالِہِ مِنْ حَجَرٍا ؤَ شَجَرٍا ؤَمَدَرٍحَتّٰی تَنْقَطِعَ الاَرْضُمِنْ ھٰا ھُنَا وَھٰاھُنَا۔[ 40

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا:

”کوئی شخ-ص لبیک نھیں کھتا مگر یہ کہ اس کے دائیں بائیں ،پتھر درخت ،ڈھیلے اس کے ساتھ لبیک کھتےھیں یھاں تک کہ وہ زمین کو یھاں سے وھاں تک طے کر لے ”۔

:1]نھج البلاغہ خ ١۔ ]

١١ ۔نھج البلاغہ :خ ١۔ / 2]وسائل الشیعہ : ١۵ ]

3]نھج البلاغہ :خ ١ ]

١١ ۔نھج البلاغہ:خ ١۔ / 4]وسائل الشیعہ: ١۵ ]

5]نھج البلاغہ :خ ١۔ ]

٧۵ ۔ / 6]بحار الانوار : ١٨٣ ]

١۔ / ١١ ۔علل الشرایع : ۴١١ / 7]وسائل الشیعہ : ١٠٣ ]

٢۔ / ١١ ۔ثواب الاعمال: ٧٠ / 8]وسائل الشیعہ : ١٠٩ ]

١۔ / ١١ ۔علل الشرایع : ۴١١ / 9]وسائل الشیعہ : ١٠٣ ]

١۔ / ١١ ۔علل الشرایع : ۴١١ / 10 ]وسائل الشیعہ : ١٠٣ ]

۵۔ / ١١ ۔تھذیب الاحکام : ٢٣ / 11 ]وسائل الشیعہ : ١١٠ ]

٢۔ /۶٢٠/ 12 ]من لایحضرہ الفقیہ: ٣٢١۴ ]

٢۔ / ٨۔،محجة البیضاء: ١۴۵ / 13 ]مستدرک الوسائل : ١٨ ]

٢۔ / ٣۔ محجة البیضاء: ١۴۵ /١٧۵/ 14 ]سنن ترمذی: ٨١٩٠ ]

۴۔ /٢۶٢/ 15 ]الکافی : ۴١ ]

٢۔ /٢٣۵/ 16 ]من لایحضرہ الفقیہ: ٢٨٧ ]

٨۔ / ٣٠١ ۔مستدرک الوسائل : ٣٩ / 17 ]امالی صدوق: ٣۴٢ ]

۴۔تحف العقول : ١٢٣ ۔ / 18 ]وسائل الشیعہ: ١١۶ ]

١۴ ۔ / 19 ]خصال : ١٢٧ /۔وسائل الشیعہ: ۵٨۶ ]

۵۔ / 20 ]سنن نسائی: ١١۴ ]

٩۔ /۴۴/ 21 ]معجم الکبیر طبرانی: ٨٣٣۶ ]

١۴٨ ۔ / 22 ]الحج العمرة فی القرآن والحدیث : ٣٢۵ ]

٢/۵١٠/ 23 ]کافی : ۶ ]

24 ]مسند الامام زید: ١٩٧ ۔ ]

٢۵٧ ۔ / 25 ]الحج العمرة فی القرآن والحدیث: ٧١٨ ]

۴۔ /٢۵٢/ 26 ]کافی: ٢ ]

۴۔ /٢۵٢/ 27 ]کافی: ١ ]

١١ ۔ / 28 ]امالی صدوق: ۴۴٢ ۔وسائل الشیعہ: ١۴۵ ]

٩٣ ۔ / 29 ]بحار الانوار: ١٢٠ ]

۴۔ /٢٨۶/ 30 ]کافی: ٢ ]

٢۔ / 31 ]سنن دار قطنی: ٢٨۴ ]

٧۴ ۔ / 32 ]ثواب الاعمال : ١۶ ]

۵۔ /٢١/ 33 ]تھذیب الاحکام : ۵٩ ]

۴۔ /٢٨۶/ 34 ]کافی: ٣ ]

۴۔ /۵۴٧/ 35 ]کافی: ٣۴ ]

۵۔ /٢٣/ 36 ]تھذیب الاحکام : ۶٨ ]

۵۔ / 37 ]تھذیب الاحکام : ٢٢ ]

٢۔ / ٢۔وسائل الشیعہ: ٣١۴ / 38 ]عیون اخبار الرضا: ٢۵٨ ]

۴۔ /٣٣٧/ 39 ]کافی: ٣ ]

٢۔ /٩٧۵/ 40 ]سنن ابن ماجہ: ٢٩٢١ ]

Read 1372 times

Add comment


Security code
Refresh