آپریشن «سچا وعدہ» مزاحمتی بلاک کے لیے باعث فخر

Rate this item
(0 votes)
آپریشن «سچا وعدہ» مزاحمتی بلاک کے لیے باعث فخر

ایکنا نیوز کے مطابق بین الاقوامی ویبنار بعنوان  «سچا وعدہ؛ ایرانی اقتدار اور تجاوز گر کی سزا»  سوشل پلیٹ فارم https://www.aparat.com/iqnanews/live پر منعقد ہوئی۔

 

عباس خمیار؛ یونیورسٹی آف ریلیجنز کے وائس چانسلر، باقر درویش؛ بحرین ہیومن رائٹس ایسوسی ایشن کے چیئرمین، شیخ یوسف قاروت؛ سویڈن میں لبنانی شیعوں کی سپریم اسمبلی کے نمائندے اور تہران میں لبنانی تحریک امل کے نمائندے صلاح فاس اس ویبینار میں موجود تھے۔

تہران میں امل لبنانی تحریک کے نمائندے صلاح فاس نے اس ویبینار میں اپنی تقریر کے دوران کہا کہ صیہونی دشمن کی دمشق کے قونصل خانے پر جارحیت کے جواب میں ایران کی طرف سے  "سچے وعدے" کی کارروائی میں اس حقیقت کو ظاہر کیا گیا ہے کہ  ایران کے خلاف صیہونی دشمن کی جارحیت کا جواب درست طریقے سے دیں سکتا ہے اور کسی بھی جارحیت کا نہ صرف دفاعی بلکہ جارحانہ طور پر بھی جواب دینے کی صلاحیت رکھتا ہے اور ایران کی فوج اور انٹیلی جنس فورسز بہت اعلیٰ سطح پر ہیں۔

 

صلاح فاس کے الفاظ کی وضاحت ذیل میں دی گئی ہے:

پیارے بھائیو اور بہنو، آپ پر سلامتی ہو اور خدا کی رحمتیں اور برکتیں ہوں۔

شام میں اسلامی جمہوریہ کے قونصل خانے پر اسرائیل کے حملے اور IRGC کے ایک گروپ کے کمانڈروں کی شہادت کے 14 دن کے بعد، ایران نے جنگ خندق کی برسی کے موقع پر ردعمل ظاہر کیا۔

سب سے پہلے ہمیں اسلامی جمہوریہ ایران کی اعلیٰ سطح کی فوجی، سیاسی اور سفارتی طاقت اور فیصلہ سازوں کی مضبوطی پر زور دینا چاہیے کیونکہ یہ آپریشن مختلف پہلوؤں سے ایک نازک اور مشکل بین الاقوامی اور علاقائی لمحے میں ہے۔

غزہ پر حملے نے پوری دنیا کو دکھا دیا کہ صیہونی اور ان کے اتحادی امریکہ اور مغربی ممالک فلسطین اور خطے میں مزاحمت کو ختم نہیں کر سکتے۔ انہوں نے جنگی جرائم کا ارتکاب کیا اور ان کے مکینوں کے گھروں کو تباہ کرنا اور بچوں اور عورتوں کو انتہائی وحشیانہ جنگی جرائم کے ساتھ قتل کرنا جرائم میں شامل ہیں۔

بدقسمتی سے وہ لوگ جو انسانی حقوق اور حتیٰ کہ جانوروں کے حقوق کا دعویٰ کرتے ہیں انہوں نے عرب ممالک اور دیگر ممالک کی برادری اور آزادی اور جانوروں کے حقوق کا دعویٰ کرنے والوں کی حمایت کے تحت ہر قسم کے جنگی جرائم کا ارتکاب کیا ہے۔

 انہوں نے ہمارے اسیر میں سے ایک کو بھی رہا نہیں کیا اور وہ فلسطینی مزاحمت کو تباہ کرنا چاہتے تھے، اس لیے صہیونی جو چاہتے تھے اس میں ناکام رہے۔ لہٰذا، انہوں نے فتح حاصل کرنے کے لیے محاذوں کا دائرہ وسیع کرنے اور علاقائی جنگ شروع کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس لیے انھوں نے شام میں ایرانی قونصل خانے پر حملہ کیا۔ ان کا خیال تھا کہ ایران کو براہ راست جنگ میں گھسیٹنا امریکہ اور دیگر ممالک کو جنگ میں گھسیٹنے کا سبب بنے گا۔

وہ ایران کی فوجی، انٹیلی جنس اور سیکورٹی صلاحیتوں کے بارے میں نہیں جانتے تھے۔ لہٰذا ایران کا ردعمل محور مزاحمت کے لیے باعث فخر رہا ہے اور اپنی مضبوط اور

درست فوجی طاقت کے ساتھ ایران مختلف قسم کے فوجی حربوں سے صیہونی دشمن کو ایسا زوردار ضرب لگانے میں کامیاب ہوا جو اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا۔

ہم اس آپریشن کے نفاذ کی تفصیلات میں نہیں جانا چاہتے۔ لیکن ہم اس جواب میں کچھ اہم نکات کی طرف اشارہ کر سکتے ہیں:

اول: ایران ایک نئی سٹریٹجک مساوات قائم کرنے میں کامیاب ہوا، اس مساوات کی بنیاد پر ایران کی سرزمین کے کسی بھی حصے پر حملہ چاہے وہ سرخ لکیر کے اندر ہو یا باہر، براہ راست فوجی جواب دینا جانتا ہے۔

دوم: امریکہ اور صیہونی حکومت کی حمایت کرنے والے مغربی ممالک کی جانب سے ایران کے خلاف دی جانے والی بڑی دھمکیوں کے باوجود ایران کا ردعمل سامنے آسکتا ہے۔

تیسرا: ایران کے ردعمل نے یہ حقیقت ظاہر کی کہ ایران کسی بھی جارحیت کا نہ صرف دفاعی بلکہ جارحانہ انداز میں جواب دینے کی صلاحیت رکھتا ہے اور ایران کی فوجی اور انٹیلی جنس فورسز بہت اعلیٰ سطح پر ہیں۔

چوتھا: ہم کہہ سکتے ہیں کہ ایران کا پہلا ردعمل اس کے پاس موجود زبردست طاقت کے مقابلے میں معمولی تھا۔ عسکری علم کے لحاظ سے یہ ایک حقیقت ہے کہ پہلے حملے میں اپنی پوری طاقت نہیں دکھانی چاہیے۔

اس کارروائی کا مقابلہ کرنے میں صیہونی حکومت کی ناکامی، چند گھنٹے پہلے اس کا علم ہونے کے باوجود، ایران کی اعلیٰ طاقت کو ظاہر کرتی ہے۔ صیہونی حکومت اور اس کے اتحادی ممالک کی فوجی اور انٹیلی جنس تیاریوں اور جدید ترین فضائی دفاعی نظام اور فائر کے لمحے اور طویل فاصلے تک میزائلوں کے مشاہدے کے باوجود اور کئی ممالک سے گزرنے کے باوجود ڈرونز اور میزائلوں نے فوجی اڈوں کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ یہ حکومت  اس حملے کا مقابلہ نہیں کر سکی۔ اگر بیرونی ممالک خصوصاً امریکہ کی مدد نہ ہوتی تو 98 فیصد میزائل اور ڈرون مقبوضہ علاقوں میں داخل ہو چکے ہوتے۔

میرے خیال میں اسرائیلیوں کی شکست کا وقت اور حماس اور مزاحمت کی فتوحات کا وقت آگیا ہے اور انشاء اللہ مستقبل میں مزید کامیابیاں ہوں گی۔/

 

Read 34 times