نسل پرست صیہونی حکومت کے بارے میں امریکی عوام کا رویہ بدل گیا ہے: ایران

Rate this item
(0 votes)
نسل پرست صیہونی حکومت کے بارے میں امریکی عوام کا رویہ بدل گیا ہے: ایران

تہران، ارنا - ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے صیہونی حکومت کی طرف امریکہ میں رائے عامہ کی شدید تبدیلی پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا ہے کہ امریکیوں بالخصوص اشرافیہ کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ اپنے ملک کی غاصب حکومت کی حمایت پر سوال اٹھائیں جو ان کے اپنے مفادات کی قیمت پر آتی ہے۔

یہ بات ناصر کنعانی نے اتوار کے روز اپنے ٹویٹر پیج میں کہی۔
انہوں نے کہا کہ رائے عامہ کے تازہ ترین سروے پورے امریکہ میں رائے عامہ میں جعلی صیہونی حکومت کی نسل پرستانہ نوعیت کی طرف مضبوط تبدیلی کو ظاہر کرتے ہیں۔
کنعانی نے اس معاملے پر امریکی عوام کے رویوں پر یونیورسٹی آف میری لینڈ کے ایک حالیہ سروے کا بھی اشارہ کیا، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ 20 فیصد ریپبلکن اور 44 فیصد ڈیموکریٹس نے اسرائیل کو نسل پرست حکومت کے طور پر بیان کیا جو کہ نسل پرستی کی طرح ہے۔
انہوں نے کہا کہ انتخابات کی بنیاد پر بائیکاٹ، ڈیوسٹ اور پابندیاں  تحریک کی حمایت میں بھی اضافہ ہوا ہے۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ یقیناً اس جعلی اسرائیلی حکومت کی نوعیت اور وجود کے خلاف مزید حیران کن نتائج برآمد ہوں گے اگر صیہونیوں کے خلاف آزادی اظہار کے لیے زمین ہموار کی جائے، امریکا کو صیہونی لابی کے قبضے سے آزاد کر دیا جائے اور اس سے زیادہ وسیع اور آزاد سروے کیا جائے۔ ا
ایرانی محکمہ ترجمان نے کہا کہ امریکہ میں عام عوام اور اشرافیہ دونوں اس سوال کا جواب تلاش کرنے کے حقدار ہیں کیونکہ امریکی انتظامیہ نے غصہ کرنے والی، رنگ برنگی، غیر جمہوری، اور زوال پذیر صیہونی حکومت کے فائدے کے لیے اپنے ملک اور دسیوں دوسرے ممالک کے عوام کے مفادات کو قربان کر دیا ہے جنہیں وہ بظاہر "اتحادی" کہتے ہیں۔
واضح رہے کہ اکانومسٹ میگزین نے ایک تجزیاتی رپورٹ میں صیہونی حکومت کو درپیش خطرات کا ذکر کیا ہے اور ان میں سے اہم ترین اندرونی تنازعات کو قرار دیا ہے۔ اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اسرائیل کے موجودہ غیر لبرل سیاسی راستے میں، امریکہ میں اس کی عوامی حمایت کمزور ہو جائے گی اور مزید دھڑے بندی ہو جائے گی۔ تاکہ چار میں سے ایک امریکی یہودی کہے کہ اسرائیل ایک نسل پرست ادارہ ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے

Read 206 times