اسرائیل پہلے سے زیادہ منقسم ہے: ڈوئچے ویلے

Rate this item
(0 votes)
اسرائیل پہلے سے زیادہ منقسم ہے: ڈوئچے ویلے

سحر نیوز/ دنیا: جعلی اور غاصب صیہونی حکومت کے قیام کی 75ویں برسی کے موقع پر ڈوئچے ویلے خبر رساں ادارے نے رپورٹ دی ہے کہ یہ حکومت پہلے سے کہیں زیادہ منقسم ہے۔

اس جرمن خبر رساں ادارے نے اپنی رپورٹ کے مقدمے میں لکھا ہے کہ تل ابیب بظاہر ایک دوراہے پر کھڑا ہے اور صیہونی حکومت کی انتہائی دائیں بازو کی کابینہ کی عدالتی اصلاحات نے گہرے اختلافات کو جنم دے دیا ہے۔

اس رپورٹ میں مقبوضہ علاقوں میں اسرائیلی وزیراعظم بنیامن نتن یاہو کی حکومت کے خلاف بڑے پیمانے پر مظاہروں کی طرف اشارہ کیا گیا اور لکھا گیا ہے کہ ہر ہفتے کی رات مقبوضہ علاقوں میں ہزاروں افراد نتن یاہو کی انتہائی دائیں بازو کی کابینہ کے عدالتی نظرثانی کے منصوبے کے خلاف مظاہرے کرتے ہیں۔

ہر ہفتے نتن یاہو مخالف مظاہروں میں حصہ لینے والے ایک ریٹائرڈ یہودی کیمسٹ نے ڈوئچے ویلے کو بتایا ہے کہ میں فطرت کے لحاظ سے بہت پر امید ہوں لیکن ان دنوں میں بہت مایوسی کا شکار ہوں، لیکن ہم ہار نہیں مان رہے ہیں۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ گزشتہ چار مہینوں میں اس متنازعہ منصوبے کے مخالفین اور حامیوں کے درمیان معاشرے میں تقسیم مزید بڑھ گئی ہے۔ اس منصوبے کے مخالفین کا کہنا ہے کہ عدالتی نظرثانی سے اسرائیل کی جمہوریت کو خطرہ ہے جبکہ حامیوں کا کہنا ہے کہ اس پر لگام لگانا ضروری ہے جسے وہ حد سے زیادہ طاقتور سپریم کورٹ قرار دیتے ہیں۔

مقبوضہ علاقے کے ایک صیہونی باشندے کا کہنا ہے کہ وہ اس حکومت کے مستقبل کے بارے میں بہت پریشان ہیں اور اس بات پر زور دیتے ہیں کہ عدالتی نظرثانی کے منصوبے پر تنازعہ "خانہ جنگی کا باعث بن سکتا ہے"۔

Read 238 times