قرآنی برائت اور حضرت ابراهیم(ع)

Rate this item
(0 votes)
قرآنی برائت اور حضرت ابراهیم(ع)

حجۃ الاسلام والمسلمین سید عبدالفتاح نواب، امور حج و زیارت کے نمائندے اور ایرانی زائرین کے نگران کی الوداعی تقریب 28 مئی بروز جمعہ دوپہر کو امام خمینی (رہ) میں منعقد ہوئی۔

حجۃ الاسلام والمسلمین نواب نے تہران روانگی سے قبل امام خمینی انٹرنیشنل اسکوائر پر اس سال کے حج اسٹاف کے ساتھ ملاقات میں رہبر معظم کے رہنما اصولوں کا حوالہ دیتے ہوئے فرمایا: اس سال کے حج کے نعرے کی بنیاد قرآن پر مبنی، ہمدردی اور اتحاد ہے۔ اور اس کی تاکید ہمیشہ امام اور راحیل نے کی ہے۔ اسلامی اقتدار اور اس کے ساتھ مشرکین کی بریت اور ظالموں سے بیزاری بھی حج 1403 کے محور میں سے ہے۔

 

مکہ اور مدینہ میں قرآنی محفلیں

حج و زیارت کے امور میں ولی فقیہ کے نمائندے نے اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ اس سال حج کی تقریب کے دوران مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں متعدد قرآنی مجالس منعقد کی جائیں گی، کہا کہ رہبر معظم نے اس سال حج کے حکام سے ملاقات میں بعض نکات بیان کئے جنمیں۔ اتحاد ان نکات کا نچوڑ ہے جن کا امام خمینی (رہ) اور رہبر معظم نے حج اور زیارت کے دوران اپنے نمائندوں سے مسلسل اظہار کیا ہے۔

انہوں نے اتحاد، ہمدردی اور یکجہتی کو آج کے معاشرے کی ضرورتوں میں شمار کیا اور کہا: «یا أیها المسلمون اتحدوا اتحدوا» کا نعرہ قرآنی آیت " اِعْتَصِمُوا بِحَبْلِ اللّه جَمِیعاً وَلاَ تَفَرَّقُوا سب" سے لیا گیا ہے۔

اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ اسلامی حاکمیت اور مسئلہ فلسطین اس سال کے حج کے نعرے کا ایک اور حصہ ہے، حج و زیارت کے امور میں ولی فقیہ کے نمائندے نے کہا: اگر امت کے درمیان اسلامی اتحاد ہوگا تو اسلامی اقتدار کا مسئلہ حل  ہوگا۔ اور اسلامی اقتدار بھی مظلوم فلسطینی قوم کا دفاع ہے۔

صیہونی حکومت کے لیے نفرت کا اظھار

 

حجۃ الاسلام والمسلمین نواب نے مزید اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ صیہونی حکومت کی نفرت کا مسئلہ حج کے موسم سے مخصوص نہیں ہے اور یہ مسئلہ آج پوری دنیا میں موجود ہے، اور فرمایا: امریکہ اور یورپ کےعلمی مراکز۔ آج صیہونی حکومت سے نفرت کا اظہار کر رہے ہیں۔ بیت اللہ الحرام کے تمام زائرین بھی صیہونی حکومت سے نفرت کرتے ہیں لیکن بیزاری کا یہ اظہار اس طرح کیا جانا چاہیے کہ حج کے علاقے کی حرمت اور خدا کے محفوظ مقام کی حفاظت ہو اور مشرکین سے بری ہونے کا اہم مسئلہ اجاگر ہو۔ یقینی طور پر سعودی عرب کے قوانین کے دائرے میں رہتے ہوئے اور مسلمانوں کے اتحاد کو مضبوط کرنے کے لیے کیا جانا چاہیے۔

معصومیت کی قرآنی منطق کو عالم اسلام میں منتقل کرنا

 

ایکنا کے نامہ نگار کے اس سوال کے جواب میں کہ رہبر معظم کے وفد کی بریت کی قرآنی منطق کو عالم اسلام میں منتقل کرنے کے لیے کیا عملی منصوبے ہیں، انہوں نے کہا: حضرت ابراہیم علیہ السلام کی سیرت، اخلاقی اور تعلیمی زندگی کو جاننا اور متعارف کرانا؟ (ص) بریت کی قرآنی منطق کو عالم اسلام تک پہنچانے کا بہترین ذریعہ ہے اور اس سلسلے میں رہبر معظم کے مشن کی طرف سے حال ہی میں "ابراہیمیت" کے نام سے ایک کتاب شائع ہوئی ہے۔

آخر میں حجۃ الاسلام والمسلمین نواب نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام بریت کے بانی ہیں اور فرمایا: بیزار کا اظھار ہونا فطری ہے اور اس تناظر میں ابراہیم خلیل اللہ کی شخصیت اور زندگی کے بارے میں جاننا بہت ضروری ہے۔/

 

Read 136 times